منی لانڈرنگ یا ٹیکس بچانے میں پاکستان کمپیوٹر ایسوسی ایشن کا کوئی بھی عہدیدار ملوث نہیں ,نعیم صدیقی

Pakistan Computer Association

منی لانڈرنگ یا ٹیکس بچانے میں پاکستان کمپیوٹر ایسوسی ایشن کا کوئی بھی عہدیدار ملوث نہیں ہے. مخصوص لوگ کمپیوٹر اور آئی ٹی پر اپنی اجارہ داری قائم کر کے قیمتیں بڑھانے کی سازشیں کر رہے ہیں پاکستان کمپیوٹر ایسوسی ایشن کو یہ کریڈٹ ضرور جاتا ہے کہ اس نے پاکستان بھر میں نہایت کم قیمت پر کمپیوٹر اورلیپُ ٹاپ مہیا کیے ہیں امپورٹرز ملٹی نیشنل کمپنیز سے نئے کمپیوٹرز خریدنے کی بجائے ہانگ کانگ ،دبئی اور سنگاپور سے خرید کردرآمد کرتے ہیں جن پر پچیس تا چالیس فیصد کم لاگت آتی ہے .. ان دنوںپرنٹ میڈیا، الیکٹرونک میڈیا اور سوشل میڈیا پر پاکستان میں کام کرنے والی مختلف آئی ٹی کمپنیوں کے خلاف مہم چلائی جارہی ہے جس میں پاکستان کسٹم کی جانب سینٹ کمیٹی برائے تجارت و ٹیکسٹائل کو دی جانیوالی رپورٹ کا حوالہ دیا جا رہا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ آئی ٹی کمپنیاں اصل قیمت سے کم قیمت پر مال امپورٹ کرکے ٹیکس بچانے کے علاوہ منی لانڈرگ میں بھی ملوث ہیں۔اگرحقائق کی روشنی میں دیکھا جائے تو یہ ایک ایسا الزام ہے جس کے پس پردہ کچھ مخصوص عناصر کے مفادات ہیں جو پاکستان میں کمپیوٹر اور آئی ٹی پر اپنی اجارہ داری قائم کر کے اس کی قیمتیں بڑھانے کی سازشیں کر رہے ہیں۔ اصل صورت حال یہ کہ پاکستان میں اس وقت دو ملٹی نیشنل کمپنیوں کے ڈیسک ٹاپ اور لیپ ٹاپ کمپیوٹرز پاکستان میں سب سے زیادہ منگوائے جا رہے ہیںان میں پرانے کمپیوٹرز اور لیپ ٹاپ کی تعداد برانڈ نیو کی نسبت 15 گنا زیادہ ہے ۔قیمت کم ہونے کی وجہ سے پرانے کمپیوٹرز کم آمدنی والے طبقے کی تعلیمی اور دیگر ضروریات کوپورا کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ بعض پاکستان کے امپورٹرز ملٹی نیشنل کمپنیز سے نئے کمپیوٹرز اور لیپ ٹاپ خریدنے کی بجائے ہانگ کانگ ،دبئی اور سنگاپورکے ٹریڈرز سے خرید کردرآمد کرتے ہیں جن پر پچیس تا چالیس فیصد کم لاگت آتی ہے۔پاکستان میں جتنے بھی تاجر اس کاروبار سے منسلک ہیں ان کا سامان باقاعدہ انوائس کے تحت آتا ہے اور اس پر حکومت کو باقاعدگی سے مروجہ ٹیکس ادا کیا جاتا ہے اس میں ابہام یا ٹیکس بچانے والی کوئی بات نہیں ہے جبکہ منی لانڈرنگ میں کمپیوٹر ایسوسی ایشن کا کوئی بھی عہدیدار کسی بھی صورت ملوث نہیں ہے البتہ پاکستان کمپیوٹر ایسوسی ایشن کو یہ کریڈٹ ضرور جاتا ہے کہ اس نے پاکستان کے کونے کونے میں نہایت کم قیمت پر کمپیوٹر اور لیپ ٹاپ کے علاوہ آئی ٹی کا سامان مہیا کیا ہے جس کی وجہ سے متوسط اور غریب سے غریب لوگ جو تعلیم کے شعبے یا چھوٹے کاروبار سے وابستہ ہیں وہ اس سہولت سے استفادہ کر رہے ہیں۔ یہ دونوں صورتیں ان ملٹی نیشنل کمپنیوں کیلئے پریشانی کا باعث ہیں کیونکہ وہ پاکستان میں مہنگے داموں کمپیوٹراور لیپ ٹاپ کی فروخت کے ایجنڈے پر کام کر رہی ہیں۔ چنانچہ کچھ ملٹی نیشنل کمپنیاں کو نوازا جا رہا ہے اس طرح کے منفی ہتھگنڈوں سے کمپیوٹر کے کاروبار کو تباہ کیا جا رہا ہے اس میں کچھ بااثر سیاستدان ایسے لوگوں کی سرپرستی کر رہے ہیں جو اس کاروبار پر اجارہ داری رکھنا چاہتے ہیں ان لوگوں نے حکومتی حلقوں میں اثروسوخ کی وجہ سے کسٹم حکام پر دبائو ڈال کر اپنی مرضی کے مطابق کسٹم ویلیوایشن منظور کروا لی ہے۔ اس طرح اب وہ اپنی منظور نظر ایک ملٹی نیشنل ڈسٹری بیوشن کمپنی کے ذریعے آئی ٹی کا مال مہنگے داموںمنگوا کر پاکستانی قوم کا قیمتی زرمبادلہ ضائع کر رہے ہیں جس کی روک تھام ضروری ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ مخصوص ملٹی نیشنل کمپنیاں پاکستان میں مقابلے کی فضا ختم کرکے اپنے مذموم مقاصدکی تکمیل میں مصروف ہیں تاکہ پاکستانی قوم کو کم قیمت پر حاصل آئی ٹی ٹیکنالوجی کا راستہ روک کر ترقی کی دوڑ میں پیچھے رکھا جا سکے جو کہ قوم دشمنی اور اور کرپشن کی بدترین مثال ہے۔ پاکستان کمپیوٹر ایسوسی ایشن ایسی کسی بھی سازش کا حصہ نہیں بنے گی اور ایسے قوم دشمنی پر مبنی اقدامات کی مذمت کرتی رہے گی ۔ہماری حکومت اور وزیراعظم سے گذارش ہے کہ وہ آئی ٹی میں مخصوص اور مفاد پرست لوگوں کی اجارہ داری کو کامیاب نہ ہونے دیں اور پاکستان کمپیوٹر ایسوسی ایشن کے بارے میں کیے جانے والے پروپیگنڈے کی بجائے اصل صورتحال کو بہتر بنانے پر توجہ دی جائے۔

Leave a Reply

*