پاکستان میں تعمیرات کے شعبے میں خصوصی ریلیف کا وزیر اعظم کا دانشمندانہ فیصلہ

نعیم صدیقی

Naeem Siddiqi
Naeem Siddiqi

کورونا وائرس کی وبا کے پیش نظر مزدور طبقہ سب سے زیادہ توجہ طلب ہے اور حکومت ان کے لیے خصوصی ریلیف فراہم کر رہی ہے۔ انہوں وزیر اعظم عمران خان نے نے تعمیرات کے شعبے کے لیے 1200 ارب روپے کے پیکج کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ تعمیرات کے شعبہ میں پیسہ لگانے والوں سے کوئی سوال نہیں ہوگا۔انہوں نے شعبہ تعمیرات کو انڈسٹری کا درجہ دینے کا اعلان کیا۔ 14 اپریل سے تعمیراتی سیکٹر کھل جائیں گے۔تعمیراتی شعبے کے لیے فکسڈ ٹیکس کا نظام لایاجارہاہے جبکہ صوبوں کے ساتھ مل کر سیلز ٹیکس بھی کم کیا جارہا ہے۔نیا پاکستان ہاسنگ اسکیم کے لیے 30 ارب روپے کی سبسڈی دی جارہی ہے۔ اسکیم میں سرمایہ کاری پر 90 فیصد ٹیکس معاف ہوگا۔سیمنٹ اور اسٹیل انڈسٹری پر ود ہولڈنگ ٹیکس لاگو ہوگا۔ پاکستان میں کورونا چیلنج مغربی دنیا سے مختلف ہے۔یہاں ایک طرف کورونا ہے تو دوسری طرف غربت ہے۔
وزیر اعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس کی وبا کے دوران مزدور طبقہ سب سے زیادہ توجہ طلب ہے، تعمیرات کے شعبے کو مراعات فراہم کرنے مزدور طبقے کو اس صورتحال میں ریلیف ملے گا۔
وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدار ت کورونا وائرس کے پیش نظر معیشت پر پڑنے والے اثرات خصوصا تعمیرات کے شعبے کے حوالے سے اعلی سطح کا اجلاس ہوا جس میں وزیر معاشی امور حماد اظہر، وزیر منصوبہ بندی اسد عمر، وزیر برائے فوڈ سکیورٹی مخدوم خسرو بختیار، مشیر خزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ، مشیر تجارت عبدالرزاق داد، مشیر ادارہ جاتی اصلاحات ڈاکٹر عشرت حسین، چیئرمین نیا پاکستان ہاسنگ اتھارٹی لیفٹیننٹ جنرل انور علی حیدر، قائم مقام چیرپرسن ایف بی آر نوشین جاوید امجد اور سینئر افسران نے شرکت کی۔
تعمیرات کے شعبے کو مراعات فراہم کرنے سے روزگار کے مواقع بڑھیں گے، معیشت مضبوط ہو گی اور مزدور طبقے کو اس صورتحال میں ریلیف ملے گا۔کورونا وائرس کے باعث ملک میں ہونے والے معاشی نقصانات کو ریلیف پہنچانے کے لیے ‘زراعت کے بعد تعمیرات کا شعبہ ایسا ہے جس میں لوگوں کو روزگار دیا جاسکتا ہے۔تعمیرات ایسی صنعت ہے جس کے ساتھ ساتھ معیشت کا پہیہ چلے گا لیکن حکومت کی خواہش ہے کہ ہمارے دیہاڑی دار مزدور کو روزگار ملے کیونکہ معلوم نہیں کہ دو ہفتے کے بعد کیا ہوگا۔ود ہولڈنگ ٹیکس معاف کردیا گیااور صرف اسٹیل اور سیمنٹ میں ود ہولڈنگ ٹیکس کو برقرار رکھا گیا ہے جبکہ تعمیرات کے شعبے میں شامل دیگر چیزوں پر ٹیکس معاف کردیا ہے۔پاکستان میں پہلی دفعہ ہے کہ تعمیرات کی صنعت کے لیے ایک بورڈ قائم ہوگا جس کا کام ہی اپنی صنعت کو پروموٹ کرنا ہوگا۔
اس پیکج کے دو مقاصد تھے، سب سے بڑا مقصد مزدور طبقے کو ریلیف دینا اوردیہاتوں میں زرعی شعبے کو سرگرم ہونے کی اجازت دینا ہے اور ایسا ہی اقدام شہروں میں تعمیرات کے شعبے کے لیے بھی کیا گیا ہے تاکہ شہر میں مزدوروں کو روزگار مل سکے۔مزید یہ کہ زراعت کا شعبہ دیہات میں کام کرتا رہے کیونکہ اس وقت فصل کی کٹائی کا موسم ہے۔
تعمیرات کے شعبہ سے 40 کے لگ بھگ صنعتیں منسلک ہیں، تعمیرات کے شعبہ سے جہاں ان صنعتوں کو ترقی ملے گی وہاں نوجوانوں کیلئے نوکریوں کے مواقع میسر آئیں گے۔

срочный займ на карту https://credit-n.ru/offers-zaim/vivus-potrebitelskie-zaymy-online.html срочный займ на карту https://credit-n.ru/order/kreditnye-karty-ubrir-card.html займы на карту без отказа https://credit-n.ru/informacija.html https://credit-n.ru/order/zaim-fedoro.html https://credit-n.ru/order/zaim-moneza.html быстрые займы на карту hairy woman займ на карту сбербанка срочно без отказавзять займ онлайн на киви кошелекденежный займ онлайн срочный займ под залог недвижимостизайм в евросетизайм с 18 лет онлайн займ онлайн срочнозайм на счетвеббанкир займ взять займ в интернетебыстрый займ на карту мирзайм онлайн всем займ с просрочкойекапуста займ без процентовонлайн займ без процентов на карту заим на картузайм 10000 на картузайм онлайн переводом золотая корона займ в благовещенскезайм 6000 рублейзайм 150 000 взять займ 1000 на картузайм экспресс тобольскбелка кредит займ займ в хабаровске100% займзайм онлайн киви займ в тюменизайм без отказа на 6 месяцевзайм онлан займ без работызайм экспресс номер телефоназайм отличные наличные займ на домузайм улан удэзайм без фото

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں