دنیا بھر کی طرح کورونا وائرس کی دوسری لہر نے پاکستان کی معیشت پر بھی منفی اثرات مرتب کیے ہیں لیکن یہ بات حوصلہ افزا ہے کہ ہمارے ٹیکس جمع کرنے والے اداروں کی کارکردگی اس مشکل صورتحال میں بھی بہتر دکھائی دیتی ہے۔صنعت و تجارت میں بھی حوصلہ افزا حالات ہیں۔حکومت کی مثبت پالیسیوں کی بدولت معاشی سرگرمیوں میں مزید بہتری آئے گی۔ وفاقی بورڈ آف ریونیو ایف بی آرکی جانب سے رواں مالی سال کے پہلے 7 ماہ جولائی سے جنوری کے دوران وصولیاں25 کھرب 70 ارب روپے تک پہنچ گئی ہیں۔ایف بی آر کی جانب سے جاری کردہ عبوری اعداد و شمار ظاہر کرتے ہیں کہ رواں مالی سال کے ان 7 ماہ میں وصولیاں 25 کھرب 50 ارب روپے کے ہدف سے 20 ارب روپے تک زیادہ رہیں۔سالانہ بنیاد پر ریونیو کلیکشن 6.4 فیصد تک بڑھی جو گزشتہ سال کے اسی عرصے میں 24 کھرب 16 ارب روپے تھی۔واضح رہے کہ مالی سال 21-2020 کے لیے بجٹ تیار کرتے ہوئے حکومت نے بین الاقوامی مالیاتی ادارے آئی ایم ایف کو مالی سال 20 کے 39 کھرب 89 ارب روپے کے مقابلے میں 49 کھرب 63 ارب روپے تک بڑھنے کی یقین دہانی کرائی تھی جو 24.4 فیصد کے اضافے کا تخمینہ تھا۔
چیئرمین ایف بی آر جاوید غنی کا کہنا تھا کہ ریونیو کی کارکردگی میں بہتری کووڈ 19 کی دوسری لہر کے درپیش چیلنج کے باجود بڑھتی معاشی سرگرمیوں کی عکاسی کرتی ہے۔انہوں نے امید ظاہر کی ہے کہ جیسے معاشی بحالی میں تیزی آئے گی ریونیو کی کارکردگی بھی مزید بہتر ہوگی۔ان کا کہنا تھا کہ ماہانہ بنیادوں پر جنوری میں خالص وصولی 340 ارب روپے کے ہدف کے مقابلے میں 364 ارب روپے رہی جو ہدف سے 7 فیصد یا 24 ارب روپے تک زیادہ ہے، مزید یہ کہ سالانہ بنیادوں پر اگر دیکھیں تو ٹیکس وصولی گزشتہ سال کے اسی مہینے کے 294 ارب روپے کے مقابلے 24 فیصد زیادہ رہا، جو سالانہ بنیادوں پر پہلی دوہندسوںکی ماہانہ ترقی ہے۔
مندرجہ بالااعداد و شمار سے ظاہر ہوتا ہے کہ ری فنڈز کی رقم 129 ارب روپے رہی جو گزشتہ سال کے 69 ارب روپے کے مقابلے 87 فیصد کا اضافہ ہے، جو برآمدی صنعت کے لیے لکویڈیٹی کے مسائل سے بچنے کے لیے ایف بی آر کے فاسٹ ٹریک ری فنڈز کے حل کی عکاسی کرتا ہے۔وہیں ٹیکس بیس کو وسیع کرنے کی کوششوں کے ابتدائی اشارے یہ ظاہر کرتے ہیں کہ اس طرح کی کوششیں سود مند ثابت ہورہی ہیں کیونکہ 30 جنوری تک انکم ٹیکس گوشواروں کی تعداد گزشتہ سال کے 23 لاکھ 10 ہزار کے مقابلے میں 9 فیصد بڑھ کر 25 لاکھ 20 ہزار رہی، اس کے علاوہ ریٹرنز کے ساتھ ٹیکس ڈپوزٹ 48 ارب 30 کروڑ روپے رہا جو گزشتہ سال صرف 29 ارب 60 کروڑ روپے تھا اور یہ اس میں 63 فیصد کا اضافہ ظاہر کرتا ہے۔اس کے علاوہ ایف بی آر نے تقریبا 14 لاکھ ٹیکس دہندگان کونوٹس جاری کیے ہیں جنہوں نے اپنی قانونی ذمہ داریوں کی تعمیل میں ریٹرن فائل کرنا تھا یا صفر ٹیکس ریٹرنز جمع کرائے یا اپنے اثاثوں کی غلط معلومات دی تھی۔اس حوالے سے کہا جاتا ہے کہ یہ مشق ایک حوصلہ افزا رد عمل ظاہر کرتی ہے تاہم دوسری طرف متعدد اقدامات متعارف کروانے کے باوجود انکم ٹیکس کی وصولی توقعات سے کافی کم رہی ہے اور اب امید کی جا رہی ہے کہ رفتہ رفتہ اس میں بہتری آئے گی۔
جولائی سے جنوری کے دوران انکم ٹیکس کی وصولی ایک ہزار 20 ارب روپے کے ہدف کے مقابلے میں 955 ارب روپے رہی جو 65 ارب روپے کی کمی کو ظاہر کرتی ہیں۔تاہم اگر گزشتہ سال کے اسی عرصے سے موازنہ کیا جائے تو انکم ٹیکس وصولی 5 فیصد ترقی ظاہر کرتی ہے کیونکہ گزشتہ سال اسی عرصے میں یہ وصولی 917 ارب روپے تھی۔علاوہ ازیں مالی سال 21 کے پہلے 7 ماہ میں سیلز ٹیکس کلیکشن گزشتہ سال کے اسی عرصے کے 10 کھرب 27 ارب روپے سے 16 فیصد بڑھ کر 11 کھرب 93 ارب روپے رہی تاہم ہدف کا تخمینہ 10 کھرب روپے تھا۔یہ ترقی ایندھن کی قیمتوں کے بڑھنے، درآمدات میں اضافے اور معاشی سرگرمیوں کی بحالی کے نتائج کی صورت میں سامنے آئی۔دوسری جانب فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی کلیکشنز گزشتہ سال کے 144 ارب روپے کے مقابلے میں 3 فیصد بڑھ کر 149 ارب روپے ہوگئی تاہم جولائی سے جنوری کے دوران ایف ای ڈی کا ہدف 171 ارب روپے تھا جو 22 ارب روپے کی کمی سے حاصل نہ ہوسکا۔اس کے علاوہ جولائی سے جنوری کے دوران کسٹمز کلیکشن 399 ارب روپے رہا جو گزشتہ سال کے اسی عرصے میں 381 ارب روپے تھا تاہم زیر جائزہ مہینوں میں کسٹمز کا ہدف 341 ارب روپے تھا جو حاصل کرلیا گیا۔مزید یہ کہ جنوری میں کسٹمز ڈیوٹی نے گزشتہ سال کے مقابلے میں 22 فیصد سے زائد ترقی دیکھی اور یہ بھی تخمینہ لگائے گئے ہدف سے زیادہ رہی۔محکمہ کسٹمز نے ریونیو کلیکشن میں اضافے کی وجہ سے جنوری میں زیر التوا کسٹمز چھوٹ کی ادائیگی بھی کی گئی ہے۔ان اعداد و شمار کی روشنی میں یہ کہا جا سکتا ہے کہ پاکستان کی معیشت بہتری کی جانب گامزن ہے اور آئندہ چند سالوں میں وطن عزیز کی معیشت استحکام کی جانب گامزن ہو گی۔

кто брал займ под материнский капиталзайм под мат капиталзайм под материнский капитал краснодар онлайн займ е заеммоментальный займ онлайн на киви кошелеконлайн займ на длительный срок лайм-займзайм или заемзайм онлайн без отказа как получить займ онлайн без отказазайм 50 тысяч рублей на картупервый займ без процентов отзывы заявка на займ деньги будутзайм пенсионерам на карту маэстрозайм до пенсии оформить займ на картуполучить первый займ без процентовзайм от частного лица быстрый займ на электронный кошелекзайм денег в волгоградезайм 8000 на карту мониста займзайм от частного лица под расписку спбзайм без звонков на карту займ под залог птс тольяттзайм в белгородебыстрый займ калуга займ под залог птс челябинскзайм на киви кошелек без паспортазайм под расписку новосибирск займ без банкаоформить займ с плохой кредитной историейвзять срочный займ

Leave a comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *